خوشبو میں نہاتے رنگ


 

عطا الرحمن قاضی !!

یہ 13 فروری کا جناح ہال تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ساہیوال آرٹس کونسل کی اختتامی تقریب نکہت گل کی طرح پھیل چکی تھی ۔۔۔کبھی تیز اور بلند قہقہے کی آواز آتی ، گویا ساز زور سے بجا ۔کبھی آہستہ آہستہ باتیں ہوتے ہوئے خامشی طاری ہو جاتی ، گویا باد نسیم پھولوں میں ہلکے ہلکے چل کے رک گئی۔۔۔۔۔۔۔۔مسکراہٹیں ، اندھیرے میں میں صبح کی کرن کی طرح اتر آئی ہیں اور سب سامعین و ناظرین زلف یار کی طرح بکھر بکھر کر ہڑپہ میوزیم کے ثقافتی ورثہ میں جانے کے لئے گاڑیوں میں سمٹ رہے تھے کہ میں نے الٹے بانس بریلی کے ،اسلام آباد کی طرف رخت سفر باندھا ۔
یار !! اسلام آباد کا نام کس نے رکھا تھا ۔؟؟
۔۔۔۔میں نے رات رنگ آنکھوں اور شام چہرے مسافر سے زمزمہ مکالمہ کی چھیڑ خوباں شروع کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔واں اک خامشی تھی ان سب کے جواب میں
توسن خیال فیلڈ مارشل محمد ایوب خان ۔۔۔ کے زمانے میں ملکی معیشت کو آسیب کی طرح چمٹے 22 خاندانوں کی طرف مائل پرواز ہؤا تو، عارف والا، کے رانا موٹرز کو چھوڑتا ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔میری چشمِ نم وہاں جا پہنچی جس کے بارے میں والد گرامی خادم رزمی نے کہا تھا ::
جہاں مٹی میں رلتے ہیں بدن معصوم پھولوں کے
مجھے بخشے گئے ہیں ، دھوپ سائے ان سکولوں کے
مارگلہ کی پہاڑیوں کے دامن میں جب ۔۔۔دارالحکومت بنانے اور گندھارا تہزیب سے نئے برگ و بار کو ثمرقند بنانے کا فیصلہ کرلیا گیا تو ریڈیو اور اخبارات میں اشتہارات چھپے کہ نام مطلوب ہے !!
۔پہلے پل بنائے جاتے تھے اور چاہ کھودے جاتے تھے۔۔۔۔۔۔۔اب کام کا نام ہونا چاہئے تھا۔۔۔۔۔سو ایم. سی اسکول عارف والا …کے ایک صاحب دل کے دل میں الہام اتارا گیا کہ دنیا کے نقشے پر نمودار ہونے والی نظریاتی ریاست پاکستان کا ۔۔۔۔صدرمقام ۔۔۔۔۔۔بھی اسم با مسمی ہونا چاہئے !!
الہام زرخواب کا حقدار ہے لاریب ۔۔۔۔۔!!
جو شخص سدا شعبہء تعلیم میں سر ہے
عبدالرحمن قاضی معلم اول تھے ۔۔۔فکر اقبال کے خوشہ چین تھے .قادر الکلام شاعر اور ادیب تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔آتے ہیں غیب سے یہ مضامین خیال میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔قرطاس ابیض پہ ۔۔۔۔اسلام آباد۔۔۔لکھا ۔نیکی کی اور دریا میں ڈال دی ۔
۔ایک دن مبارک باد کی شہنائیاں بجائی گئیں کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسلامی جمہوریہ پاکستان کے مرکزی کردار کا نام نامی اسم گرامی ۔۔۔۔۔اسلام آباد ۔۔۔۔۔منتخب کر لیا گیا ہے۔۔۔۔۔۔۔نام تجویز کرنے والے کو حسبِ اعلان پانچ سو روپے نقد سکہ رائج الوقت ،ایک سند اور پلاٹ دیا جائے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔باتاں اچھی تھی!!
۔عبد الرحمن قاضی……
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صدر مدرس ایم سی سکول عارف والا کا نام صرف ، تاریخ اسلام آباد ، مرتبہ مولانا اسماعیل ذبیح کی کتاب کے ملبے میں دب گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وعدے سرخ فیتے کی افسر شاہی کی فائلوں میں دفنائے گئے۔
یادش بخیر یہ ، عطاء الرحمن قاضی ، کے عالی مرتبت دادا جان تھے ۔جنہیں وہ اپنے منفرد شعری مجموعے میں ابا جی لکھتے ہیں ،کبھی کہتے بھی ہوں گے !!
۔۔۔۔۔۔۔۔خوشبو میں نہاتے رنگ کی رباعیات نے میرے سفر کو کھنکتے سکے کی طرح سجل کر دیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سچی محبت ،زبان کی دکان اور لفظوں کے بازار میں نہیں ملتی ۔اس کو دل کے خزانے میں ڈھونڈنا اور طبیعت کے تہہ خانے میں ٹٹولنا چاہیئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ رب ہنر کی عطا ہے کہ قاضی کا خاندان تیسری پشت سے درس و تدریس کو پیشہ نہیں بلکہ عبادت سمجھ کر مکمل خشوع و خضوع سے ادا کر رہا ہے۔علم وادب سے وابستگی انہیں ورثے میں ملی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عطا نے کلاسیکی کو تخلیقی سفر کا گیان نامہ بنایا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاید چند برسوں میں صرف رباعیات ۔۔۔پر مشتمل کسی نوجوان ( تاریخ پیدائش 1979ء) شاعر کی پہلی کتاب ہے ۔ان رباعیوں میں جمالیاتی تنوع بھی ہے اور موضوعاتی رنگا رنگی بھی۔۔۔۔۔رباعی کے چوبیس اوزان میں اپنے جوہر کے اظہار سے
مجھے ان مباحث کی یاد دلاتی ہے جو کبھی ۔۔۔۔ترانہ ، چہار بیتی ، دوبیتی یا رباعی کے اساتذہ فن میں شجرہ اخرب و شجرہ اخرم کے مکالمے دل و دماغ پر دستک دیتے تھے۔۔۔۔۔
ایرانی مصوری سے مزین سرورق۔۔۔عمرخیام کی رباعیوں کی طرح نو ڈالتی اشاعتِ دوم 2013ء میں ہوئی ۔قیمت سرمہ مفت نظر صرف 200 روپے ہے ۔۔۔۔۔۔۔135صفحات میں سے ہر رباعی اس احساس کو بڑھوتری دیتی ہے کہ جتنی آزادیاں اس صنفِ شعر میں بلحاظ ہیئت دی گئی ہیں ، شاید ہی وہ آزادیاں کسی اور صنفِ شاعری کو حاصل ہوں ۔۔۔۔۔۔
۔یہ کتاب آپ کو نگارشات (24 مزنگ روڈ،لاہور ) سے بھی مل سکتی ہے اور شاید شاعر سے بھی !!
مجھے تو پھر ۔۔۔۔اسلام آباد کے بنیاد گزار ۔۔۔۔قاضی عبد الرحمن ، کی یاد شام کی منڈیر سے اتر آئی ہے ۔۔۔۔جس کا انتساب عطا الرحمن قاضی کی دلکشا یادوں کا خزینہ نوازش ہے کہ ۔۔۔۔انتساب بھی ان کے نام یوں کیا ہے کہ::
آنکھوں سے اتر گیا ہے دل کے اندر
پھیلا لمحوں کا سلسلہ قرنوں پر
کانوں میں رس گھول رہی ہے کیا کیا
لہجے کی مٹھاس، انگبیں میں ڈھل کر

( منیر ابنِ رزمی۔۔۔۔)


جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے